(اعتماد (سبق آموز کہانیاں

کہانی
Spread the love

کہانی ایک نیک آدمی کی

ﺍﯾﮏ ﻧﯿﮏ ﺁﺩﻣﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﻟﻮﭦ ﺭہا تھا ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﯾﺎ ﻋﺒﻮﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﺩﻣﯽ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﺸﺘﯽ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭہ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺩﺭﯾﺎ ﻋﺒﻮﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔ ﮐﺸﺘﯽ ﺑﯿﭻ ﺩﺭﯾﺎ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﯽ ﺩﺭﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﺁ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ ﻣﯿﮟ

ﺑﯿﻮﯼ ﮐﺎ ﺧﻮﻑ ﺳﮯ ﺑﺮﺍ ﺣﺎﻝ ہو ﮔﯿﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺁﺩﻣﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﺳﮯ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺭہا ﺟﯿﺴﮯ ﮐﭽﮫ ﻏﯿﺮ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺣﯿﺮﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﻭﮦ ﻏﺼﮯ ﺳﮯ ﭼﻼ ﺍﭨﮭﯽ۔

ﺁﭘﮑﻮ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺭﮨﺎ۔ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﮐﺸﺘﯽ ﮐﻮ

ﮈﺑﻮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻣﻮﺕ ﺳﺮ ﭘﺮ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﺳﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﯾﮧ ﺳﻨﺘﮯ ﮨﯽ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻠﻮﺍﺭ ﻣﯿﺎﻥ

ﺳﮯ ﻧﮑﺎﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﯽ ﺷﮧ ﺭﮒ ﭘﺮ ﺭﮐﮫ ﺩﯼ۔

ﺑﯿﻮﯼ ﮨﻨﺲ ﭘﮍﯼ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻟﯽ ﯾﮧ ﮐﯿﺴﺎ ﻣﺬﺍﻕ ﮨﮯ؟

ﺧﺎﻭﻧﺪ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﺍﺑﮭﯽ ﻣﻮﺕ ﺳﮯ ﺧﻮﻓﺰﺩﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ۔ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮓ ﺭﮨﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﭘﮑﺎ ﮔﻼ ﮐﺎﭦ ﺩﻭﮞ

ﮔﺎ۔ ﯾﮧ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺑﯿﻮﯼ ﺑﻮﻟﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﭖ ﭘﺮ ﺍﻭﺭ ﺁﭘﮑﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﺎ ﮨﮯ ﺁﭖ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﻣﺤﺒﺖ

ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺗﻠﻮﺍﺭ ﺁﭖ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺳﮑﺘﯽ۔ ﯾﮧ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺑﻮﻻ ﺟﯿﺴﮯ ﺁﭘﮑﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺤﺒﺖ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ہے ﻭﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﭘﺮ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﻭﮦ ﭼﺎﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﺭﻭﮎ ﻟﮯ ﭼﺎﮨﮯ ﺗﻮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﮐﺸﺘﯽ ﮈﺑﻮ ﮐﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﻤﯿﮟ ﺑﭽﺎ ﻟﮯ۔

حاصل کلام:-ہم مسلمان ہیں اور ہمیں اللّٰهﷻ پر یقین کامل ہے کہ جو ستر ماؤں جیسی محبت ہم سے کرتا ہے وہ اس وبائی دور میں بھی ہمارے لئے بھلا ہی سوچے گا۔ وہ اس وباء سے ہماری حفاظت ضرور کریگا اور اگر اس وباء سے موت بھی واقع ہوتی ہے تو وہ معمولی موت نہ ہوگی بلکہ ایک شہید کی موت کے مترادف ہوگی اور یہی اس بات کا ثبوت ہے کہ اس، وباء کے دونوں ہی پہلوؤں میں اللّٰهﷻ نے ہمیں ہی فائدہ بخشنا ہے، اللّٰهﷻ کی اپنے محبوب محمد صلي اللّٰه عليه و سلم کی امت پر اس احسان میں یہ مکمل اعتماد پنہاں ہے۔

سبق آموز کہانیاں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *