اے ابوداؤدؒ تو نے 3 درہم میں جنت خرید لی

اے ابوداؤدؒ تو نے تین درہم میں جنت خرید لی
Spread the love

ابوداؤد ؒ بہت بڑے محدث گزرے ہیں ۔ جن کی کتاب ابوداؤد مدارس میں پڑھائی جاتی ہے۔ داخل درس ہے۔ ان کے واقعات میں لکھا ہے۔ کہ یہ سمندر کے کنارے کھڑے ہوئے تھے۔ اور سمندر میں جہاز اترا ہوا کھڑا تھا ایسی گودیاں اس زمانے میں نہیں تھیں۔ جیسی آج بنتی ہیں۔

جہاز ایک آدھ فرلانگ کے فاصلے پر کھڑا ہوا تھا۔ چونکہ کنارے پر پانی کم ہوتا تھا۔ وہ جہاز کیلئے کافی نہیں ہوتا تھا۔ اور لوگ کشتیوں میں بیٹھ کے جہاز میں جاتے اور سوار ہوجاتے۔

ایک جہاز فرلانگ کے فاصلے پر کھڑا تھا۔ اور امام ابوداؤدؒ سمندر کے کنارے کھڑے ہوئے تھے جہاز میں کسی شحص کو چھینک آئی۔ اس نے چھینک لے کر زور سے الحمد للہ کہا۔ تو مسئلہ یہ تھا۔ کہ جب کسی کو چھینک آئے اسے الحمدللہ کہنا چاہئے اور جس کے کان میں الحمدللہ پڑھے وہ جواب میں یرحمک للہ کہے۔

اس شخص نے الحمدللہ اس زور سے کہا کہ امام ابوداؤد ؒکے کان میں آواز آئی۔ اب ان کا جی چاہا کہ میں شریعت کی اس چیز پر عمل کروں اور یرحمک للہ کہوں تاکہ مجھے ثواب ملے حالانکہ مسئلہ یہ ہے۔ کہ چھینک لینے والے کو الحمدللہ کہنا  واجب ہے۔ جب کہ اس مجلس میں وہ موجود ہو۔ اور اس کے کان میں پڑ جائے کہ اس نے الحمدللہ کہا ہے۔

وہ یرحمک للہ کہہ کر جواب  دے یہ نہیں کہ مسجد میں ایک شخص کو چھینک آئے اور دوسرا شخص بازار میں جارہا ہو اور وہ جواب دینے کیلئے مسجد میں آجائے ۔ ایک مجلس کا مسئلہ ہے ۔ مجلس سے خارج کا نہیں ہے۔ تو امام ابوداؤد ؒپر واجب نہیں تھا۔ کہ وہ جواب دیں۔ اس لیے کہ چھینک والے ایک فرلانگ پر ہے۔ اور یہاں وہ جہاز پر ہے ۔

یہ کنارے پر ہیں مجلس بھی ایک نہیں ،جگہ بھی ایک نہیں۔ بیچ میں سمندر حائل ، مگر وہی بات ہے کہ نیکی کی حرص ہوتی ہے۔ کہ کسی نہ کسی طرح کمالیں اس نیکی کو بھی کیوں چھوڑیں۔ امام ابوداؤد ؒکی آواز اتنی اونچی تو تھی نہیں کہ یہاں کنارے سے یرحمک اللہ کہیں تو اس کے کان میں پہنچے۔

چھینک لینے والے کی آواز اتنی بلند تھی کہ اس نے الحمدللہ کہا تو اس کی آواز یہاں پہنچ گئی تو تین درہم میں کرائے کی کشتی لی اور اس کشتی میں بیٹھ کر ڈیڑھ فرلانگ کا سفر کر کے جہاز میں پہنچے اور جہاز میں اوپر چڑھ کر کہا ۔ یرحمک للہ۔ یہ گویا نیکی کمائی، مورخین لکھتے ہیں۔

اے ابوداؤدؒ تو نے 3 درہم میں جنت خرید لی

جس وقت انہوں نے جاکر یرحمک للہ کہا۔ غیب سے ایک آواز پیدا ہوئی۔ کہنے والا نظر نہیں آتا تھا۔ آواز یہ آئی، اے ابوداؤد! آج آپ نے تین درہم میں جنت خریدی یہ آواز کان میں پڑی معلوم نہیں کسی خلوص سے یرحمک اللہ ،حالانکہ امام ابوداؤد محدث ہیں۔

جانے کتنی انہوں نے حدیثیں لکھیں ۔ اور کتنا اجر کمایا۔کتنی نوافل اور تہجد پڑھے ہوں گے، اور کتنے صدقات دیئے ہوں گے۔ لیکن جنت کی خریداری کے اس چھوٹے سے عمل کا ذکر کیا کہ تین درہم میں کشتی کرائے پر کراکر یرحمک ا للّٰہ کہہ دیا۔  ( خطبات حکیم السلام، ص: ۴۲۶)

Jannat Ka Manzar Kaisa Ho ga

اسلامی کہانیاں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *