استغفار کی برکت کا ایک عجیب واقعہ

استغفار کی برکت کا ایک عجیب واقعہ
Spread the love

حضرت امام احمد بن حنبل رحمة الله علیه ایک بار سفر  میں تھے ، عراق کے کسی دور دراز گاؤں میں رات آ پڑی نہ کوئی تعارف تھا اور نہ کوئی ٹھکانہ… ارادہ فرمایا کہ مسجد میں رات گزاریں گے ، مسجد گئے تو چوکیدار نے داخل ہونے سے منع کر دیا ، اسے بہت سمجھایا مگر وہ ضد کا پکا کسی طرح نہ مانا ۔

امام صاحب رحمة الله علیه نے فرمایا میں پھر اسی جگہ سو جاتا ہوں ، مسجد کے باہر فرش اُسی پر لیٹ گئے ، مگر چوکیدار پیچھے پڑا تھا، وہ آپ کی پاؤں پکڑ کر گھسیٹ کر مسجد سے دور کررہا تھا ، ایک نانبائی (روٹی پکانے، بیچنے والے) نے یہ منظر دیکھا تو امام صاحب رحمة الله علیه سے گزارش کر کے اُن کو اپنے گھر رات گزارنے کے لیے لے گیا ، اور آپ کا بہت اکرام کیا ،

پھر وہ آٹا گوندھنے باہر نکلا…امام صاحب رحمة الله علیه نے دیکھا اور سنا کہ وہ چلتے، پھرتے، آٹا گوندھتے مسلسل “استغفار” کر رہا ہے ۔ صبح اُس سے پوچھا تو کہنے لگا جی! یہ میرا مستقل معمول ہے….

استغفار کا ظاہری فائدہ

فرمایا اس استغفار کا کوئی ظاہری فائدہ اور ثمرہ بھی دیکھا ؟

کہنے لگا جی ہاں! جو دعاء بھی کرتا ہوں اس استغفار کی بدولت قبول ہوجاتی ہے ۔

اب تک صرف ایک دعاء قبول نہیں ہوئی ۔

پوچھا کونسی؟

کہنے لگا امام احمد بن حنبل رحمة الله علیه کی زیادت کی دعاء

فرمایا: میں احمد بن حنبل ہوں ، تمہاری یہ دعاء بھی قبول ہوئی ، اور مجھے گھسیٹ  کر تمہارے پاس لایا گیا۔

خود بھی استغفار کریں اور گھر والوں کو بھی تلقین کریں۔

جزاک اللہ

اسلام کے بارے میں پڑھیں

استغفار کا مطلب اور اس کا طریقہ

رمضان کے بارے میں پڑھیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *