عید اور ہم: عید مبارک

عید مبارک
Spread the love

تحریر: بشارت حمید

عید مسلمانوں کےلیے خوشی کا تہوار ہے لیکن بدقسمتی سے یہ تہوار دوسروں کو سہولت اور راحت پہنچانے کی بجائے انکی مشکلات میں بے یارومددگار چھوڑ دینے کا موقع بن چکا ہے۔

عید کے دنوں میں آپکو کوئی ایمرجنسی ہے تو ہوتی رہے۔۔ جو اس پریشانی میں آپکی مدد کر سکتا ہے وہ عید کی چھٹیوں پر ہے۔ آپکی گاڑی خراب ہو گئی ہے تو سب کچھ بند ہے بھئی عید کی خوشی منائی جا رہی ہے۔۔ آپکو گھر میں کسی الیکٹریشن یا پلمبر کی ایمرجنسی ضرورت پڑ گئی ہے تو پڑتی رہے۔۔ سب عید منا رہے ہیں۔۔

اگر خوش قسمتی سے بندہ مل بھی گیا ہے اور مرمت کے دوران کسی چیز کی ضرورت پڑ گئی ہے تو نہیں مل سکتی۔۔ سٹور والے عید منا رہے ہیں۔ چاہے انکا گھر سٹور کے ساتھ ہی ہو لیکن نہیں جی۔۔ اب عید کے بعد ہی مطلوبہ چیز ملے گی۔ کوئی مریض ہے۔۔ کسی ڈاکٹر سے چیک کروانے کے ضرورت ہے۔۔ تو ہوتی رہے۔۔ صاحب عید کی خوشی منا رہے ہیں لہذا کسی کو چیک نہیں کر سکتے ۔۔ اپنے مرض سے کہیں عید کے چھٹیاں ختم ہونے کا انتظار کرے۔ یہ چند مثالیں ہیں۔۔ ایسی ہی مثالیں ہر شعبہ زندگی میں ملیں گی۔۔

کبھی خود کو اس قسم کی ایمرجنسی کیفیت میں محسوس کرتے ہوئے تصور کرکے دیکھیں کہ اگر خدانخواستہ عید کے موقع پر ہمیں ایسی کوئی ضرورت پڑے اور ہر طرف سے صاف انکار ہو کہ بھئی عید کے بعد ہی کام ہو گا۔۔ تو ہم پر کیا بیتے گی۔ کیا عید کا تہوار خوشیاں تقسیم کرنے کا نام ہے یا خوشیاں چھین لینے کا۔۔۔ ایک دوسرے کی مدد کرنے کا نام ہے یا کورا جواب دینے کا۔۔۔ کیا ہمارے دین نے عید کا یہی تصور دیا ہے جو ہم نے اپنا رکھا ہے۔۔۔؟ذرا مختلف انداز سے سوچئے۔۔
عید مبارک

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *