Numbness and Tingling: Causes and Treatment | جسم کے کسی حصے کا سن ہونا: وجوہات اور احتیاطی تدابیر

Numbness and Tingling
Spread the love

جسم کے کسی  حصے کا سن ہونا یا سو جانا  بہت ہی کامن مسئلہ ہے۔۔۔!

عام طور پر  ہاتھ، بازو، پاؤں کا سن ہونا،  حمل کے دوراننچلے دھڑ میں سن ہونے کا احساس،
یہ سب  علامات ہیں کہ  جسم میں خون اور پیغامات  لانے اور لے جانے والے
سسٹم میں کہیں کوئی رکاوٹ ہو رہی۔ 

اس کی ایک مثال 

جب کبھی ایک کار میں  جگہ کم ہو اور افراد زیادہ بیٹھ جائیں اور  ہاتھ پیر ہلانے کی گنجائش نہ رہے تو
بازو یا ٹانگ سن ہو جاتے ہیں۔  کبھی کبھار  ایسا کسی بھی عمر میں  کسی کے ساتھ بھی ہوجاتا ہے۔

رات میں بازو سر سے اوپر کر کے  سونے یا ہاتھ کسی طرف دب جانے سے بھی  سن ہونا عام سی بات ہے۔
یہ علامت ہے  کہ جسم کے اس حصے میں  اعصاب اور خون کی آمد و رفتمیں کہیں کوئی رکاوٹ ہو رہی ہے۔

میری رائے میں  درد اور نمب نیس  اللہ رب العزت کے بنائے اس  شاہکار انسانی جسم کے دو بہت ہی
مہربان دوست ہیں۔  دوست اس لئیے کہ یہ دونوں  درد اور سن ہوناآپ کو متوجہ کرتے ہیں
کہ جسم کے اس حصے  کے ساتھ کوئی مسئلہ ہے..!
اسے دور کریں  یہاں تک آنے والی  خون اور اعصابی نظام  کی رکاوٹ کو چیک کیجئے…!

اپنے جسم کے بارے میں  آپ سے بہتر کوئی نہیں جانتا ۔  اس لئے یہ کام آپ کو ہی کرنا ہوگا۔

وجوہات

نوٹ کیجئے  وہ کیا وجوہات ہیں جن کی وجہ سے  جسم کا کوئی حصہ سن ہو رہا ہے۔  چند وجوہات یہ ہیں:

  • ·         غلط پوسچر
  • گردن جھکا کر رکھنا
  • ·         بہت موٹا تکیہ استعمال کرنا
  • زیادہ وزن
  • بازو سر سے اوپر رکھ کر سونا
  • موٹر سائیکل پر زیادہ سفر
  • نرم فوم ،ڈھیلی چارپائی، پر سونا
  • کرسی، صوفے پر گھنٹوں ایک پوزیشن پر بیٹھنا
  • آکسیجن کی کمی
  • خون میں ریڈ سیلز کی کمی
  • ورزش کی کمی
  • پانی کی کمی
  • حمل کے دوران نچلے دھڑ میں سن ہونے کا احساس

علاج،  احتیاط  اور  تھراپیز

ابتدائی علاج، احتیاط اور خود سے  کی جانے والی چند تھیراپیز

بیٹھنے، چلنے اور لیٹنے کے انداز کو درست کیا جائے

 ہر تیس منٹ بعد کرسی سے اٹھ کر تیس سیکنڈ پی ٹی کی جائے جو اسکول میں سکھائی گئی تھی
 گردن ہمیشہ سیدھی رکھیں
 کمر کے پیچھے کشن لازمی رکھیں

 تکیہ پتلا ہو بہتر ہے گردن کے لئے خاص طور پر ڈیزائن کیا گیا فوم کا تکیہ استعمال کیا جائے

 بیڈ کا فوم نرم ہو گیا ہو تو تبدیل کر لیں، چارپائی ڈھیلی نہ ہو، سب سے بہتر تخت یا فرش پر سونا ہے

روئی کا گدا یا فوم کی آرتھو شیٹ بچھا لیں

 دن میں کئی بار یوگا جیسی اسٹریچنگ ایکسرسائز  بہت ضروری ہے

مساج، جسم کے ہر حصے پر مالش کیجئے کوئی بھی آئل لگا کر خاص طور پر گردن، جانگھ یعنی گروئن ایریا  اور دونوں ہاتھوں، پیروں پر مساج سے سارے جسم کا  اعصابی نظام ایکٹو ہوجاتا ہے
دن میں دو بار آئل لگا کر مساج کیجیے  اور پانچ بار ہر نماز کے بعد کوئی بھی پی ٹی جیسی  ایکسرسائز کی جائے۔

 حمل کے دوران پریگنینسی بیلٹ پہنیں
 پوسچر بیلٹ گردن اور شولڈر کو سیدھا رکھتی ہے
 پانی کی کمی دور کریں دن میں ڈھائی سے ساڑھے تین لیٹر پانی ضرور پیجیئے

 مغز کدو یعنی پمکن سیڈ  میں وہ قیمتی اجزاء موجود ہیں۔  جن کی ہمارے جسم کو لازمی ضرورت ہےبچے، جوان، بزرگ سب کے مفید ہیں۔
جؤ کا تلبینہ، دلیہ، ستو بہترین دوا اور غذا ہے۔

  لیکن  اگر یہ زیادہ عرصے تک رہے  تو یقیناً کسی پیچیدہ مسئلہ کی طرف  نشاندہی کرتی ہے۔اس کے لئیے  ماہر نیورولوجسٹ کو چیک کرانا چاہیئے۔  ہمارے ملک کے اکثر سرکاری اور رفاہی ہسپتال میں  نیورولجی ڈپارٹمنٹ موجود ہیں اور  بہت اچھا کام کر رہے ہیں۔ان کا تجربہ بہت زیادہ ہوتا ہے۔  اس لئے وہ بہتر مشورہ دے سکتے ہیں۔

جاوید اختر آرائیں
4 اپریل 2020
#جاوید_اختر_آرائیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *